Hassan Bukhari

یہ جو لذت ِ عمر ِ دوام ہے

یہ جو لذت ِ عمر ِ دوام ہے
پھیکی ہے گر اجل نہ ہو
جو سکوں میسر ہے اس دفعہ
کہ اب تو تُو بھی مخل نہ ہو
کن عملوں کی بات کرے ہی تو
کہ تیرا عمل ، ہی عمل نہ ہو
تجھے دیکھ کر اب بھی ممکن نہیں
کہ میرا دل اتھل پتھل نہ ہو
تو مٹ چکا ہو کب سے حسن
جو کریموں کا فضل نہ ہو