Hassan Bukhari

کوئی مزاجِ یار کا حوصلہ

کوئی مزاجِ یار کا حوصلہ
کہ صبر کا بھی چارا نہیں
وہ ہے بھی اور ہمارا نہیں

کوئی خیال ِ یار کا سلسلہ
رکا بھی ہے اور رکا نہیں
گلہ بھی ہے اور گلہ نہیں

کوئی وصال ِ یار کی آرزو
مٹی بھی ہے اور مٹی نہیں
کٹی بھی ہے اور کٹی نہیں

یہ جنم جنم کی مسافتیں
یہ دن و رات کی مساحتیں
رکی بھی ہیں اور رکی نہیں

یہ لمحے عجب تنہائی کے
یہ جزبے نا رسائی کے
نئے بھی ہیں اور نئے نہیں

تو کیا یہ عجیب سا راز ہے
یہ کیسا کارساز ہے
جو ہے بھی اور مجھ میں نہیں
جو بسا بھی ہے اور کہیں نہیں
جو میں بھی ہے اور میں۔۔۔نہیں
جو ہے اور اس طرح سے ہے ۔۔
کہ ہے چار سو اور کہیں نہیں۔۔