Hassan Bukhari

بعد مدت کے پھر ہوئی بارش

بعد مدت کے پھر ہوئی بارش
گرتی ، اترتی ، اٹھتی بارش
تیرے بدن سے پیوستہ بھی ہے
تیری خوشبو سے نتھری بارش
قطرہ قطرہ رحمت رحمت
آسمانوں سے اُتری بارش
میری سوچ سے الجھی الجھی
تیرے دھیان سے نکھری بارش
اتنی مدت بعد لگے ہے
گویا مجھ پہ ہی اتری بارش
تیری یاد سے سمٹی لپٹی
مجھ پر بکھری بکھری بارش
تیرا لمس میرے لیئے ہے
صحراؤں میں اتری بارش
تجھ سے اس برسات میں مانگوں
تیرے تن کی مجھ پہ بارش
حسن ایک تپسیا ہے یہ
من پہ میرے وجد کی بارش